ھفتہ, 29 فروری 2020


مودی نے نہرو کو بھی نہ چھوڑا

نئی دہلی: بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے الزام لگایا ہے کہ جواہر لال نہرو نے بھارت کا وزیراعظم بننے کے لیے ہندوستان کو تقسیم کروایا۔

میڈیارپورٹس کے مطابق بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے بھارتی پارلیمنٹ کے ایوان زیریںلوک سبھا سے صدر کی بحث پر جواب دیتے ہوئے کہا کہ 1950ء میں لیاقت-نہروپیکٹ پر دستخط ہوئے تو اس میں لکھا گیا کہ بھارت میں اقلیتوں سے امتیازی سلوک نہیں ہوگا۔اس وقت نہرو نے معاہدے میں صرف اقلیتوں کے تحفظ کی بات کیوں کی؟۔

نریندر مودی نے کانگریس پرسکھ کْش فسادات کاالزام بھی لگایا اور کہا کہ کانگریس نے ان فسادات میں ملوث رہنماکمل ناتھ کومدھیہ پردیش کاوزیراعلیٰ بنادیاہے۔لوک سبھا کی کارروائی متنازع قانون پر پھرہنگامہ آرائی کی نذر ہوگئی۔

دوسری جانب راجیہ سبھا کے چیئرمین ایم وینکیا نائیڈو نے راجیہ سبھا میں کہا کہ ذات پات پر مبنی مردم شماری کے لئے این پی آر پر عمل درآمد ضروری ہے۔

بھارتی سپریم کورٹ نے دہلی میں ہفتہ کو اسمبلی انتخابات کے پیش نظر شاہین باغ دھرنے کے خلاف اپیلوں پر سماعت پیر تک کے لئے ملتوی کردی۔دہلی کے شاہین باغ میں خواتین کا احتجاجی دھرنا تقریبا دو مہینے سے جاری ہے۔بھارت کی دیگر ریاستوں اور شہروں میں بھی متنازع قوانین کے خلاف دھرنے ، مظاہرے اور ریلیاں جاری ہیں۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment