پیر, 26 اکتوبر 2020


سانحہ کوئٹہ کےبعدقومی سلامتی کا اعلٰی سطح کااجلاس

ایمزٹی وی(اسلام آباد)وزیراعظم نوازشریف کی زیر صدارت اسلام آباد میں قومی سلامتی کے حوالے سے اہم اجلاس ہوا. اجلاس میں ملک کی داخلی سلامتی کی صورتحال اور نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کا جائزہ لیا گیا جب کہ وزیر داخلہ چودہری نثاراورمشیر قومی سلامتی ناصرجنجوعہ نے بریفنگ بھی دی اوروزیراعظم کی جانب سے نیشنل ایکشن پلان پرکل تفصیلی اجلاس پھرسے طلب کرلیا گیا ہے جسے اہم قراردیا جارہا ہے۔

اجلاس کے دوران وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ حکومت سانحہ کوئٹہ میں بہنے والاخون رائیگاں نہیں جانے دے گی، ہم ایک نظریے کے خلاف جنگ میں مصروف ہیں جو ہمارا طرززندگی بدلنا چاہتے ہیں، قوم متحد ہے اوردہشت گردوں کے مکمل صفائے کے لئے حکومت کے ساتھ ہے۔ ہم نے ملک کو درست راستے پر گامزن کر دیا ہے، اب پرامن،مستحکم اور خوشحال پاکستان کے ثمرات ہر شہری تک پہنچیں گے اور ہم ملک کو ہر قسم کی دہشت گردی و انتہاپسندی سے پاک کریں گے۔

وزیر اعظم نواز شریف نے کہا کہ فاٹا میں کامیاب آپریشن کے بعد دہشت گرد مایوس ہو کر اہداف تبدیل کر رہے ہیں، دہشت گرد سمجھتے ہیں وہ قوم میں عدم برداشت اور اختلاف کے بیج بوسکتے ہیں، بہترنتائج کے لئے قانون نافذ کرنے والے ادارے ایک دوسرے سے تعاون بڑھائیں جب کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں میں بھی رابطہ کاری بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment