اتوار, 29 نومبر 2020


مجھے بھی پارلیمنٹ میں نہیں رہنا چاہیئے

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد)میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے سپریم کورٹ کے صادق اور امین کے ریمارکس پر کہا کہ بے شک 62,63 سے کوئی بھی سیاستدان نہ بچے ملک تو بچ جائے گااگرمیں بھی اس میں فٹ نہیں آتا تو مجھے بھی پارلیمنٹ میں نہیں رہنا چاہیے۔

تفصیلا ت کے مطابق عمران خان نے کہا کہ پاناما لیکس میں نوازشریف اورانکے بچوں کا نام آیا توہم نے جواب طلب کیا۔ انکشافات میں وزیراعظم اور ان کے بچوں کے خلاف ثبوت آگئے ہیں۔

اس حوالے سے چیئرمین تحریک انصاف کا مزید کہنا تھا کہ جھوٹ بولنا چھوٹی موٹی چیز نہیں ہے۔دوسرے ملکوں میں جھوٹ بولنے پر استعفے دے دیئے جاتے ہیں۔وزیراعظم کا معیار عام شہری سے اونچا ہوتا ہے کیونکہ وہ عوام کے پیسے کا رکھوالی ہوتا ہے۔وزیراعظم نوازشریف نے پارلیمنٹ میں لکھی ہوئی تقریرکی ،نوازشریف نے پہلی مرتبہ تسلیم کیاکہ انکے بچوں کی جائیداد بیرون ملک میں ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ 2012میں مریم نوا ز نے انٹرویومیں کہا کہ انکی اورانکے خاندان کی بیرون ملک کوئی پراپرٹی نہیں ہے۔قرضے لیکر اداروں کے قرضے اتارے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ جدوجہد اس لئے کررہے ہیں کہ پاکستان کے ادارو ں کو مضبوط ہوتا دیکھنا چاہتے ہیں۔ٹیکس کولیکشن کیسے بڑھے گی جب ملک کا وزیراعظم ہی کرپٹ ہوگا۔سربراہ تحریک انصاف نے کہا کہ ڈاکوﺅں کا احتساب ہونا چاہیے جب تک احتساب نہیں ہوتا انصاف نہیں مل سکتا ہے۔

 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment