ھفتہ, 15 مئی 2021


مسلمانوں کے قدیم تاریخی مقامات کو کھولا جا ئے،پاکستان ہندوکونسل

اسلام آباد: پاکستان ہندوکونسل کے سرپرست اعلیٰ اور ممبر قومی اسمبلی ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی نے بھارت پر زور دیا ہے کہ مسلمانوں کے قدیم تاریخی مذہبی مقامات کو کھولنے کے انتظامات کیے جائیں۔
 
میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر رمیش کمار نے بتایا کہ پاکستان ہندو کونسل کے اعلیٰ سطحی وفدنے وزیراعظم آزاد جموں کشمیر راجا فاروق حیدر خان کی خصوصی دعوت پرقدیمی مندرشاردا پیٹھ کی بحالی کے انتظامات کا جائزہ لینے کے بعد اپنی تجاویز پیش کردی ہیں۔
 
ڈاکٹر رمیش وانکوانی کا کہنا تھا کہ دنیا کی خوبصورت ترین وادی نیلم میں واقع علم و دانش کی ہندو دیوی شاردا سے منسوب شاردا پیٹھ کا تاریخی مقام زمانہ قدیم میں ایک نمایاں تعلیم درس گاہ تھی ، جہاں دنیا بھر سے لوگ علم کی پیاس بجھانے آتے تھے۔
 
انہوں نے امریکہ کی جانب سے مذہبی آزادی کے حوالے سے جاری کردہ رپورٹ پر اپنے تبصرے میں کہا کہ موجودہ ملکی قیادت نے کرتارپور راہداری اور شادرا پیٹھ کی بحالی سے ثابت کردیا ہے کہ پاکستان خطے میں امن و امان کے قیام، علاقائی سلامتی، مذہبی ہم آہنگی اور اقلیتوں کے حقوق کی حفاظت کیلئے پرعزم ہے۔
 
انہوں نے بھارتی حکومت سے مطالبہ کیا کہ پاکستان کے مثبت اقدامات کے جواب میں وہاں بھی مسلمانوں کے تاریخی مذہبی مقامات کو بحال کرتے ہوئے مذہبی آزادی کا خاص خیال رکھا جائے۔
 
یا د رہے کہ پاکستان کی جانب سے بھارت کے سکھ یاتریوں کی سہولت کے لیے گوردوارہ صاحب کرتار پور سے پاک بھارت سرحد تک اپنی حدود میں کرتارپور کوریڈور فیز ون میں ساڑھے 4 کلو میٹر سڑک تعمیر جاری ہے ، اسی طرح بھارت بھی اپنی حدود میں سرحد تک راہداری بنائے گا۔
 
تاہم بھارت کی جانب اس معاملے میں بھی ٹال مٹول کا سلسلہ جاری ہے اور ایک سیدھے سادھے معاملے کو، جس میں بھارت سے آنے والے یاتریوں کے لیے بے پناہ سہولیات ہیں بلاوجہ تاخیر کا شکار کررہا ہے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment