اتوار, 05 اپریل 2020


تعلیمی اداروں میں بچوں پرتشدد، عدالت کاسماجی کارکن کی درخواست پربڑافیصلہ

اسلام آباد ہائیکورٹ نے سماجی کارکن گلوکارشہزادرائےکی درخواست پرعمل درآمدکرتے ہوئےبچوں پر جسمانی تشددپرپابندی عائد کردی۔
 
اسلام آباد ہائیکورٹ نے سماجی کارکن گلوکار شہزاد رائے کی درخواست پر وفاقی اداروں میں بچوں پر تشدد کی قانونی گنجائش تاحکم ثانی معطل کردی اور حکومت سے 5 مارچ تک جواب ،طلب کرلیا۔
 
عدالتی حکم کے بعد شہزاد رائے کا کہنا تھا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ کا بچوں پر تشدد سے متعلق تاریخی فیصلہ ہے، سندھ میں بچوں پرتشدد کے خلاف قانون موجود ہے۔
انہوں نے کہا کہ دنیا کی بہترین ریسرچ ہے کہ تشدد سے تشدد میں اضافہ ہو جاتا ہے، بچے کی پٹائی کی جاتی ہے جو خلاف آئین ہے، بچوں کو مارنا ان کی ذہنی نشونما کے لیے نقصان دہ ہے،عدالتی فیصلے کے بعدکوئی ٹیچر بچوں کو مار نہیں سکتا۔
 
 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment