جمعہ, 27 مئی 2022


فیسوں میں ہوشربااضافہ،قائداعظم یونیورسٹی کےطلباسراپااحتجاج

اسلام آباد: قائداعظم یونیورسٹی اسلام آبادکیمپس میں طلباکااحتجاج تاحال جاری ہے۔،

قائد یونیورسٹی (QAU) اسلام آباد کیمپس میں تعلیمی سرگرمیاں تاحال معطل ہیں
طلباء کی جانب سے ’’ بلا جواز ‘‘ فیس میں اضافےکے خلاف احتجا ج نویں روز میں داخل ہو گیا ہے۔

احتجاج کرنے والے طلباء نے واضح طور پر احتجاج جاری رکھنے کا عزم کیا ہے جب تک کہ QAU انتظامیہ باضابطہ طور پر فیسوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن واپس لینے کا اعلان نہیں کرے گی اور اسلام آباد کیپیٹل ٹیریٹری (ICT) انتظامیہ احتجاج کے تناظر میں ان کے خلاف درج تمام مقدمات کو منسوخ کردے گی۔

تفصیلات کے مطابق 2019 میں بی ایس پروگرامز کی پہلی سمسٹر فیس 59،740روپے تھی۔ جبکہ 2020 میں کورونا وائرس وبائی امراض کی وجہ سے معاشی بحران کے باوجود ، کیو اے یو انتظامیہ نے بی ایس پروگراموں کے پہلے سمسٹر فیس میں 27 فیصد اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کیا اور اسے بڑھا کر 76،030روپے کردیا۔

2020 کی فیس میں اضافہ نہ صرف کورونا وائرس وبائی امراض کے درمیان ناقابل فہم تھا بلکہ اس نے QAU ایکٹ 1973 کی بھی خلاف ورزی کی جو سالانہ صرف 5 فیصد فیس میں اضافہ کرتی ہے۔

اس سال پھر 1973 کے ایکٹ پر عمل کرتے ہوئے ، QAU انتظامیہ نے اس مہینے کے شروع میں بی ایس پروگراموں کے پہلے سمسٹر کی فیس 80,240روپے میں بڑھانے کا اعلان کیا۔
مزید یہ کہ کیو اے یو انتظامیہ نے سیکورٹی فیس بھی بڑھا دی ہے ، جو یونیورسٹی فیس کے ساتھ داخلہ فیس بھی وصول کرتی ہے۔ رواں سال 5،013 روپے سےبڑھاکر 10،626کردی ہے۔
طلباء نے استدلال کیا ہے کہ وہ پہلے ہی فیس کی ادائیگی کے لیے جدوجہد کر رہے تھے ، انہوں نے مزید کہا کہ حالیہ فیسوں میں اضافے سے ان کے والدین پر مالی بوجھ بڑھے گا۔

انہوں نے QAU انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر نوٹیفکیشن فیس میں اضافہ واپس لینے کا اعلان کرے اور ICT انتظامیہ سے پرامن احتجاج کرنے والے طلباء کے خلاف مقدمات ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔
دوسری جانب ، QAU کے ایک اعلیٰ سطحی عہدیدار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر انکشاف کیا کہ موجودہ وفاقی حکومت نے تمام سرکاری شعبے کی یونیورسٹیوں کی تمام گرانٹس معطل کر دی ہیں اور ان سے کہا ہے کہ وہ اپنے فنڈز پیدا کر کے مالی طور پر پائیدار بنیں۔

عہدیدار نے دلیل دی کہ حکومت کے فیصلے کو دیکھتے ہوئے یونیورسٹی کے پاس اپنے اخراجات پورے کرنے کی کوشش میں ہر سال فیس بڑھانے کے سوا کوئی آپشن نہیں بچا ہے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment