ھفتہ, 28 نومبر 2020


دہشت گردی کو اسلام سے جوڑنے کی کوشش کی جارہی ہے

ایمزٹی وی(اسلام آباد) ترجمان دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کو اسلام سے جوڑنے کی کوشش کی جارہی ہے اور پیرس حملوں کے بعد مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم افسوسناک ہیں۔ترجمان دفترخارجہ قاضی خلیل اللہ نے میڈیا کو ہفتہ وار بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ دہشت گردوں کا کوئی مذہب نہیں اور اسلام پرامن دین ہے جو امن و آشتی کی دعوت دیتا ہے تاہم دہشت گردی کو اسلام سے جوڑنے کی کوشش کی جارہی ہے اور پیرس حملوں کے بعد مسلمانوں کے خلاف نفرت میں اضافہ ہوا ہے جو کہ افسوسناک ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کوترکی اورروس کےدرمیان کشیدگی پر تشویش ہے اور روسی طیارے کے واقعہ کےبعدکی صورتحال پرنظررکھےہوئے ہیں جب کہ پھانسیوں پر بنگلادیشی ہائی کمیشن سے جواب طلب کیا جائے گا اور پاکستان شام میں صورتحال کا جائزہ لے رہا ہے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment