جمعہ, 13 دسمبر 2019
×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 46


ایسے جنگجوؤں کو نشانہ کیوں بنائیں جوپاکستان کیلئے خطرہ نہیں،سرتاج

ایمز ٹی وی (اسلام آباد) وزیراعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی اور امور خارجہ سرتاج عزیز نے پیر کے روز کہا ہے کہ پاکستان کو ان عسکریت پسندوں کو ہدف نہیں بنانا چاہیے جو اس کی سلامتی کے لیے خطرہ نہیں ہیں۔

سرتاج عزیز کا کہنا تھا کہ جو امریکا کے دشمن ہیں وہ خوامخواہ پاکستان کے دشمن ہوگئے ہیں۔

حقانی نیٹ ورک کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ جب امریکہ نے افغانستان پر حملہ کیا تو وہ تمام لوگ جن کو ہم نے ملکر مسلح کیا اور تربیت دی تھی، انہیں ہماری طرف دھکیل دیا گیا۔ ان میں سے کچھ ہمارے لیے خطرہ ہیں اور کچھ نہیں ہیں۔ تو ہم سب کو کیوں دشمن بنائیں؟

سرتاج عزیز نے کہا کہ پاکستانی سرزمین سے امریکا میں حملے کرنے والوں کیخلاف پاکستان نے بہت بڑا قدم اٹھایا، آپریشن سے قبل جو بھاگ گئے وہ بھاگ گئے جو رہ گئے ان سب کیخلاف کارروائی کی ہے۔ لیکن ایسے لوگوں کیخلاف کیوں کارروائی کریں جو پاکستان لیے خطرہ نہیں

فغان طالبان افغانستان کا مسئلہ ہیں اور حقانی نیٹ ورک انہی کا حصہ ہیں۔ افغان حکومت کا کام ہے کہ وہ ان سے مذاکرات کرے۔ ہم اپنی طرف سے افغان طالبان کو قائل کرنے کی کوشش کریں گے، لیکن جو نوے کی دہائی کے تعلقات تھے وہ اب نہیں ہیں۔

چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف کے دورہ امریکا کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ امریکا اور پاکستان کے درمیان تعلقات بہتری کی طرف جا رہے ہیں۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment