اتوار, 16 فروری 2020


کورونہ وائرس سےمزیداموات کی تصدیق

 
 
چین: چین کے علاقے ووہان سے شروع ہونے والے نئے وائرس کی انسان سے انسان میں منتقلی کی تصدیق کے ساتھ اس سے مرنے والے افراد کی تعداد چار ہو گئی ہے جبکہ یہ وائرس اب ملک کے دیگر بڑے شہروں میں بھی پھیل رہا ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ یہ وائرس چین کے وسطی شہر ووہان سے پھوٹا، جس کی آبادی ایک کروڑ دس لاکھ کے قریب ہے۔پیر کو اس کے 136 نئے کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ اس سے پہلے شہر میں اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 62 تھی۔اتوار کی شام تک حکام کا کہنا تھا کہ 170 افراد کا ہسپتالوں میں علاج جاری ہے جن میں سے نو کی حالت نازک ہے۔
 
یہ وائرس کیا ہے
اس وائرس کے نمونوں کو ٹیسٹ کے لیے لیبارٹری میں بھجوایا گیاہے جہاں ان پر تحقیق کی گئی۔عالمی ادارہ صحت کے حکام اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ یہ کورونا وائرس ہے۔ اس وائرس کی بہت سی اقسام ہیں لیکن ان میں سے چھ اور اس حالیہ وائرس کو ملا کر سات ایسی قسمیں ہیں جو انسانوں کو متاثر کرتی ہیں۔ان کی وجہ سے بخار ہوتا ہے سانس کی نالی میں شدید مسئلہ ہوتا ہے۔ سنہ 2002 میں چین میں کورونا وائرس کی وجہ سے 774 افراد ہلاک ہوئے اور مجموعی طور پر اس سے 8098 افراد متاثر ہوئے تھے۔
 
احتیاطی تدابیر
ہانگ کانگ یونیورسٹی میں شعبہ پبلک ہیلتھ کے صدر گیبرئیل لیونگ نے ایک پریس بریفنگ کے دوران اس وائرس سے بچنے کی احتیاطی تدابیر دی ہیں
اپنے ہاتھ بار بار دھویئں، اپنے ناک یا منہ کو مت رگڑیں۔
احتیاط کریں اور باہر جاتے ہوئے ماسک پہن کر رکھیں۔
پرہجوم جگہوں پر جانے سے اجتناب کریں۔
اگر آپ نے ووہان کا سفر کیا ہے تو اپنا طبی معائنہ ضرور کرائیں۔
اپنے ڈاکٹر سے ہرگز یہ بات مت چھپائیں کہ آپ نے ووہان کا سفر کیا۔
 
 
سرکاری خبر رساں ایجنسی ژنہوا نے پیر کے روز ژونگ کے حوالے سے بتایا ، "ناول کورونویرس کی شناخت میں صرف دو ہفتوں کا وقت لگا۔اس سے قبل ، ژونگ نے اعتراف کیا کہ مریضوں نے نئے وائرس کا انکشاف سنٹرل شہر ووہان کا دورہ کیے بغیر کیا ہے جہاں ایسا لگتا ہے کہ یہ انفیکشن سمندری غذا کی منڈی میں شروع ہوا ہے۔
 
انہوں نے سرکاری نشریاتی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ، "فی الحال ، یہ مثبت بات کہی جاسکتی ہے کہ انسان سے انسان میں منتقل ہونے کا رجحان موجود ہے۔
ووہان میونسپل ہیلتھ کمیشن نے منگل کو کہا کہ چوتھا شخص 19 جنوری کو فوت ہوگیا۔ اس 89 سالہ شخص ، جس کو دل کی بیماری سمیت بنیادی صحت کی بیماریوں کا سامنا کرنا پڑا تھا ، اس کی علامت 13 جنوری کو پیدا ہوئی تھی اور اسے پانچ دن بعد ہی اسپتال میں داخل کیا گیا تھا۔
 
یہ وبا وسطی شہر ووہان سے بیجنگ اور شنگھائی سمیت شہروں میں پھیل چکی ہے، اب تک 200 سے زیادہ کیسسز رپورٹ کئے جا چکے ہیں ۔ چین سے باہر جنوبی کوریا ، تھائی لینڈ اور جاپان میں چار کیسسز کی تصدیق ہوچکی ہے –
جنوبی کوریا نے بھی پیر کے روز اپنے پہلے کیس کی تصدیق کی ہے جبکہ تھائی لینڈ میں دو اور جاپان میں بھی ایک کیس سامنے آیا ہے۔ متاثرہ افراد حال ہی میں ووہان سے واپس آئے تھے۔
 
سنگا پور اور ہانگ کانگ میں فضائی سفر کے ذریعے وہاں سے آنے والوں کی سکرینگ کی جا رہی ہے۔ اسی طرح کے اقدامات امریکہ نے بھی جمعے کو اپنے تین بڑے ہوائی اڈوں پر لینے شروع کیے ہیں جن میں سان فرانسسکو، لاس اینجلس اور نیویارک شامل ہیں۔
 
آسٹریلوی حکام نے بھی اعلان کیا ہے کہ وہ ووہان سے سڈنی آنے والے مسافروں کی اسکریننگ شروع کریں گے کہ کہیں یہ وائرس عالمی سطح پر نہ پھیل جائے - ان کیسز میں تیزی سے اضافہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب لاکھوں چینی باشندے نئے قمری سال کے موقع پر سفر کی تیاری کر رہے ہوتے ہیں
عوامی نشریاتی ادارے نے منگل کو بتایا ، ایک شخص جس نے ووہان کا سفر کیا تھا اس نئی بیماری کی علامات ظاہر کررہا تھا۔
بیجنگ میں رہنے والی الجزیرہ کی کترینہ وو نے کہا ، "یہ وباء شاید کسی خراب وقت پر نہیں آسکتی تھی۔"
 
"یہ چین میں سفر کا سیزن ہے۔ حکومت نے ہمیشہ فخر کیا ہے کہ قمری نئے سال کے دوران آپ پورے ملک میں دو سے تین بلین دورے کرتے نظر آتے ہیں اور ووہان کوئی چھوٹا شہر نہیں ہے ، تقریبا گیارہ ملین افراد جو نہ صرف چین میں ، بلکہ بیرون ملک بھی سفر کریں گے ۔ یہ ایک بہت بڑا ٹرانسپورٹ مرکز ہے۔ "
ریاست ہائے متحدہ امریکہ اور بہت سے ایشیائی ممالک سمیت دنیا بھر کے حکام نے ووہان سے آنے والے مسافروں کی اسکریننگ میں تیزی لائی ہے۔نیشنل ہیلتھ کمیشن کے سربراہ ژونگ نے کہا کہ جنوبی چین کے صوبے گوانگ ڈونگ میں دو افراد نے یہ بیماری کنبہ کے ممبروں سے پکڑی جو ووہان تشریف لائے تھے۔
ووہان میونسپل ہیلتھ کمیشن نے کہا ہے کہ ووہان میں کم از کم 15 طبی کارکن بھی اس وائرس سے متاثر ہوئے ہیں، جن میں سے ایک کی حالت تشویشناک ہے۔ ان مریضوں کو علاج کے دوران الگ رکھا جارہا ہے۔۔ اس نئے وائرس کے جنیاتی کوڈ سے یہ معلوم ہوا ہے کہ یہ رسپائریٹری سنڈروم (سارس) سے ملتا جلتا ہے۔۔ علامات میں بخار اور سانس لینے میں دشواری شامل ہیں ، جو سانس کی بہت سی بیماریوں سے ملتے جلتے ہیں اور اسکریننگ کی کوششوں میں پیچیدگیاں پیدا کرتی ہیں
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق ، سارس کی ابتدا جنوبی چین میں 2002 میں ہوئی تھی اور اگلے مہینوں میں دنیا کے 26 ممالک میں پھیل گئی ، 8،000 سے زیادہ افراد کو اس کے زیر کنٹرول لانے سے پہلے ہی اس نے متاثر کیا۔ڈبلیو ایچ او ، جو بدھ کے روز اس وبا کے پھیلنے کے بارے میں ہنگامی اجلاس منعقد کرنے والا ہے ، نے کہا ہے کہ کسی ووہان میں وبا کا پھیلاو کسی جانور کی وجہ سے ہوا ہے
 
جنوبی کوریا نے پیر کو اپنے نئے کورونا وائرس کے بارے میں پہلا کیس پیش کیا - ایک 35 سالہ خاتون جو ووہان سے آئی تھی۔اس سے قبل تھائی لینڈ اور جاپان نے مجموعی طور پر تین کیسسز کی تصدیق کی تھی - ان سبھی نے چینی شہر کا دورہ کیا تھا۔
 
چینی ریاستی میڈیا نے دوسرے چینی شہروں میں کورونا وائرس پھیلانے کے بارے میں سوشل میڈیا پر بحث چھڑکتے ہی موڈ کو پُرسکون کرنے کی کوشش کی۔
سی سی ٹی وی کے مطابق ، پہلی بار اس معاملے پر بات کرتے ہوئے چین کے صدر شی جنپنگ نے پیر کے روز کہا کہ لوگوں کی زندگیوں کی حفاظت کو "اولین ترجیح" دی جانی چاہئے اور سی سی ٹی وی کے مطابق ، اس وباء کے پھیلاؤ کو "مستقل طور پر ہونا چاہئے"۔الیون نے کہا ، "یہ ضروری ہے کہ" اس وبا کے بارے میں بروقت معلومات جاری کریں اور بین الاقوامی تعاون کو گہرا کریں "، اور لوگوں کو" مستحکم اور پرامن بہار میلہ "کو یقینی بنانا ہوگا۔
 
یاد رہے کہ گذشتہ برس دسمبر میں یہ بات سامنے آئی کہ چین کے شہر ووہان میں دو افراد سانس کی کی بیماری کی وجہ سے ہلاک ہوئے ہیں-سائنسدان پروفیسر نیل فرگوسن کا کہنا ہے کہ وہ اس مرض کے پھیلنے کے حوالے سے اس سے زیادہ فکر مند ہیں جتنے وہ ایک ہفتے پہلے تھے۔یہ تحقیق لندن کے ایمپیریل کالج میں ایم آر سی سینٹر برائے متعدی امراض کے ماہرین نے کی ہے۔ یہ ادارہ برطانیہ سمیت عالمی ادارہ صحت کو بھی تجاویز فراہم کرتا ہے۔
 
 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment