جمعرات, 28 مئی 2020


ٹویٹس کرنے والوں کی شامت آگئی

 
 
 
 
نیویارک: سماجی رابطے اور مائیکروبلاگنگ کی ویب سائٹ ٹویٹر نے کرونا سے متعلق غلط معلومات یا متنازع ٹویٹ کرنے والے صارفین کے گردگھیرا تنگ کرنے کا فیصلہ کرلیا۔
 
ٹویٹر کی جانب سے ایک روز قبل اعلان کیا گیا ہے کہ کووڈ 19 (کرونا) کے حوالے سے غلط معلومات یا متنازع ٹویٹس کرنے والے صارفین کے ٹویٹس کو لیبلز دیے جائیں گے اور ایسے صارفین کو پیغام بھیج کر خبردار کیا جائے گا۔
 
کمپنی کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق اس اقدام کا مقصد سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر غلط اور بے بنیاد معلومات کو روکنا ہے، مستقبل میں اس کا دائرہ کار وسیع کر کے کرونا کے علاوہ دیگر موضوعات کو بھی شامل کیا جائے گا۔
 
 
 
ٹویٹر کی جانب سے جن ٹویٹر کو مختلف رنگوں کے لیبلز دیے جائیں گے اُن کے نیچے وجہ ایک لنک کے ذریعے بیان کی جائے گی تاکہ دیگر صارفین الجھن یا غلط فہمی کا شکار نہ ہوسکیں۔
 
کمپنی نے اپنے تازہ بلاگ میں بتایا کہ اُن ٹویٹس پر لیبلنگ کی جائے گی جن کی وجہ سے زیادہ نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے، ایسے ٹویٹس کو ڈیلیٹ اس لیے نہیں کیا جائے گا کہ صارفین کو غلط معلومات پھیلانے والوں کے بارے میں آگاہی ملتی رہے اور وہ ایسے اکاؤنٹس سے محتاط رہیں۔
 
 
 
کمپنی نے مزید بتایا کہ ٹوئٹس کے مواد کے مطابق انتباہ کا اضافہ کیا جائے گا جن میں کہا جائے گا کہ یہ ٹوئٹ عوامی طبی ماہرین کی رہنمائی سے متضاد ہے۔ ٹویٹر کی نئی پالیسی کا اطلاق اُن ٹویٹس پر بھی ہوگا جو پہلے پوسٹ کیے جاچکے ہیں۔
 
 
 
کمپنی کی عوامی پالیسی کی ڈائریکٹر نک پلکز کا کہنا تھا کہ جعلی خبروں کی روک تھام کے حوالے سے ہماری حکمت عملی دیگر کمپنیوں سے مختلف ہے کیونکہ ہمیں تھرڈ پارٹی کا انتظار نہیں کرنا ہوگا، لیبلز زیادہ تیزی سے کسی بھی ٹویٹ کو اجاگر کریں گے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment