ھفتہ, 28 نومبر 2020


ایپل نے نئے پروگرام شروع کرنےکااعلان کردیا

مانیٹرنگ ڈیسک : امریکی ٹیکنالوجی کمپنی نے ایپل نےگزشتہ روزسافٹ ویئر ڈویلپرز کے لئے اپنے ایپ اسٹور کمیشنوں کو کم کرنے کے لئے ایک پروگرام شروع کرنے کا اعلان کیاہے جو اسٹور سے ہر سال million 1 ملین (752،388.8 پاؤنڈ) یا اس سے کم آمدنی کرےگی۔

ایپل ایپ اسٹور پر کی جانے والی بیشتر خریداریوں میں 30 فیصد کٹوتی کرتا ہے ، حالانکہ کمیشن خریداری میں 15 فیصد رہ جاتا ہے جو ایک سال سے زیادہ عرصے تک سرگرم رہتا ہے۔

آئی فون بنانے والی کمپنی کا کہناہے کہ اگر ایک کیلنڈر سال میں ڈویلپر رکھے ہوئے اسٹور خریداری کے حصے کے طور پر بیان کیا جاتا ہے تو وہ ڈویلپرز کو خود بخود کم 15کی شرح مل جائے گی جب وہ million1 ملین یا اس سے زیادہ آمدنی حاصل کریں گے۔
سینسر ٹاور کے اندازوں کے مطابق ، ایپ اسٹور نے 2020 کے پہلے 10 مہینوں میں صارفین کے مجموعی اخراجات سے 59.3 بلین ڈالر کی آمدنی کی اور اگر ایپل میں 30 فیصد کٹوتی ہوئی تو وہ 17.8 بلین ڈالر کما سکتا تھا۔

تجزیہ کار فرم سنسر ٹاور نے کہا کہ ایپ اسٹور کی 2019 آمدنی کا 4.9 فیصد ان لوگوں سے ہوا ہے جنہوں نے مجموعی صارفین کے اخراجات میں million1 ملین سے بھی کم رقم حاصل کی ،

مائیکروسافٹ کارپوریشن ، اسپاٹائف ٹیکنالوجی ایس اے ، میچ گروپ انک اور ایپک گیمز جیسی اسٹارٹ اپس اور چھوٹی کمپنیاں جو ایپل کی ایپ اسٹور کی فیسوں اور قواعد کو لے رہی ہیں وہ فیسوں کا الزام صارفین کو انتخاب سے محروم رکھتی ہیں اور ایپس کی قیمت بڑھا رہی ہیں۔

ایپک گیمز کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ٹم سویینی نے کہاہے کہ"ایپل کے ذریعہ ایپ کے تخلیق کاروں کو تقسیم کرنے اور اسٹورز اور ادائیگیوں پر اپنی اجارہ داری کو برقرار رکھنے کے لئے حساب کتاب نہیں کیا گیا تو یہ خوشی منانے کی بات ہوگی۔

تنقیدوں کے جواب میں ، دنیا کی سب سے قیمتی کمپنی نے پہلے کہا ہے کہ اس کے قواعد ڈویلپروں پر یکساں طور پر لاگو ہیں اور یہ کہ اطلاق اسٹور اپنے 175 ممالک میں ادائیگی کا نظام قائم کیے بغیر اپنے صارفین کی بڑی تعداد تک پہنچنے کا ایک آسان طریقہ فراہم کرےگا

 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment