منگل, 20 اکتوبر 2020


حکومتی ارکان کی مولانا فضل الرحمٰن سے ملاقات

تحریک انصاف کے سینیٹر شبلی فراز اور وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کی قیادت میں حکومتی وفدنے اپوزیشن رہنماء مولانا فضل الرحمٰن سے ملاقات کی ہے۔
 
چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک روکنےکے لئے حکومت نے اپوزیشن سے رابطے تیز کردیئے۔
 
اس سلسلے میں حکومتی وفد سینیٹر شبلی فراز اور جام کمال کی قیادت میں جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ سے ملاقات کی۔
 
ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو میں شبلی فراز نے کہا کہ مولانا فضل الرحمٰن نے شفقت سے ہماری بات سنی، امید ہے وہ سینیٹ کے وقار کا خیال رکھیں گے۔
 
وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے کہا کہ مولانا فضل الرحمٰن کا سیاسی امور حل کرنے کا اپنا انداز ہے، دونوں ہی اطراف سے ایک ایک قدم اٹھانا ضروری ہے۔
 
انہوں نے مزید کہا کہ ہر سینیٹر گواہی دے گا کہ صادق سنجرانی نے سینیٹ کو بہت اچھے انداز سے چلایا ہے۔
 
مولانا فضل الرحمٰن نے جواب دیا کہ چیئرمین سینیٹ کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پر اپوزیشن ایک لمبا سفر طے کرچکی ہے، آگے آگے دیکھیے ہوتا ہے کیا؟
 
انہوں نے مزید کہا کہ چیئرمین سینیٹ کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کا فیصلہ انہی کی زیر صدارت اجلاس میں ہوا تھا۔
 
مولانا فضل الرحمٰن نے پی ٹی آئی سینیٹر شبلی فراز کی گفتگو پر ہنس کر کہا کہ آپ خود کو بھی مشکل میں ڈال رہے ہیں، انہیں بھی اور مجھے بھی۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment