بدھ, 19 مئی 2021


سندھ یونیورسٹی جامشورکےطالبعلم جعلی پولیس مقابلےمیں جاںبحق

جامعہ سندھ جامشوروکےطالبعلم مبینہ پولیس مقابلےمیں جاںبحق ہوگیا، جس کے بعد طلبا و طالبات کا احتجاج جاری ہے۔

طلبا کی ہلاکت کےبعد مختلف اضلاع میں طلبا سڑکوں پرآگئے ہیں جبکہ سوشل میڈیا پربھی عرفان جتوئی کےانصاف کےلئےآوازاٹھائی جارہی ہے جس کے بعد سماجی رابطےکی ویب سائٹ پر #JusticeforIrfanJatoi کاٹرینڈ ٹاپ کررپاہے۔

تفصیلات کی مطابق یونیورسٹی آف سندھ کے ایک طالب علم عرفان جتوئی کو جامشورو میں 10 فروری کوحراست میں لیا جسے پولیس سکھر ضلع میں اتوار کے روز مبینہ پولیس مقابلے میں گولی مار کر ہلاک کردیا گیا تھا۔

مبینہ مقابلہ تھانہ جھنگرو کی حدود میں قومی شاہراہ پر ہوا۔ پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ متوفی ، 25 سالہ عرفان جتوئی ، ڈکیتی اور دیگر جرائم میں ملوث ہونے کے علاوہ کار اٹھانے والے گینگ کا حصہ تھا۔پولیس نےیہ بھی دعویٰ کیا کہ جتوئی کے تین ساتھی فرار ہوگئے۔

ایس ایس پی سکھر عرفان سمو نے کہا ، "پولیس کو اطلاع ملی کہ کچھ ڈکیتی کی وارداتیں ہوئیں ہیں پولیس جیسے ہی جائے وقوعہ پر پہنچی ملزمان نے پولیس پر فائرنگ کردی۔ سامو نے دعویٰ کیا ، کہ وہ دوسرے اضلاع کی پولیس سے کئی جرائم میں مطلوب تھا ، انہوں نے مزید کہا کہ ان کے جرائم کی تفصیلات دوسرے اضلاع سے جمع کی جارہی ہیں۔
لیکن اہل خانہ کا موقف ہے کہ وہ ایک معصوم طالب علم تھا۔

دریں اثنا ، جتوئی کے اہل خانہ نے جامشورو ڈسٹرکٹ اور سیشن عدالت میں ایک درخواست دائر کردی جس کے ایک دن بعد اسے حیدرآباد اور جامشورو پولیس نے سندھ یونیورسٹی کے انٹرنیشنل ہاسٹل سے مبینہ طور پر اٹھایا تھا۔ اس کے دو دوستوں کو بھی گرفتار کیا گیا۔ اہل خانہ کا دعویٰ ہے کہ جتوئی 10 فروری سے لاپتہ تھا۔

عدالت نے ضلعی پولیس کو 18 فروری کو طلب کیا تھا لیکن پولیس نے اس کی گرفتاری کے بارے میں معلومات سے عاری ہے۔ جتوئی کے اہل خانہ کا الزام ہے کہ سکھر پولیس گذشتہ تین ہفتوں سے اس کی رہائی کے لئے رشوت مانگ رہی تھی۔

پولیس ذرائع نے دعوی کیا کہ جتوئی سکھر میں مقیم سیاستدان کے رشتے دار کی گاڑی چوری میں ملوث تھا۔ "وہ گاڑی واپس کرنے پر راضی ہوگیا تھا لیکن اپنے وعدے پر پیچھے ہٹ گیا جس کے بعد اسے گرفتار کرلیا گیا۔

 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment