ھفتہ, 20 اپریل 2024
×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 46


سال میں 140پولیس افسران و اہلکار جام شہادت نوش کرچکے 

ایمز ٹی وی:(کراچی) شہید ہونیوالوں میں ایک ایس پی، 5 انسپکٹراور18 سب انسپکٹر کے علاوہ ٹریفک پولیس کے اہلکار بھی شامل ہیں، پولیس اہلکاروں کو بم دھماکوں ، دستی بم اور فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا، تفصیلات کے مطابق شہر قائد میں سال 2014 پولیس کے لیے انتہائی بھاری ثابت ہورہا ہے، رواں برس اب تک 140 افسران و اہلکار جام شہادت نوش کرچکے ہیں

پولیس پر پہلا حملہ 4 جنوری کو پیرآباد کے علاقے میں کیا گیا جس میں 2 اہلکار شہید ہوگئے، 9 جنوری کو عیسیٰ نگری کے علاقے میں لیاری ایکسپریس وے ایس پی چوہدری اسلم کو ان کے کانوائے سمیت نشانہ بنایا گیا جس میں ایس پی سمیت 3 افراد نے جام شہادت نوش کیا، 13 فروری کو شاہ لطیف ٹاؤن کے علاقے میں قائم شہید بے نظیر بھٹو ایلیٹ پولیس ٹریننگ سینٹر سے نکلنے والی کمانڈوز سے بھری بس کو بم دھماکے سے اڑادیا گیا۔

واقعے میں 13اہلکار شہید اور 59 زخمی ہوئے، 24 اپریل کو پرانی سبزی منڈی کے قریب سابق ایس ایچ او انسپکٹرشفیق تنولی خود کش دھماکے میں جاں بحق ہوا، گارڈن کے علاقے میں انسپکٹر غضنفر کاظمی کو موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ کرکے ہلاک کیا، اعداد و شمار کے مطابق جنوری میں 24، فروری میں 19، مارچ میں 5، اپریل میں 9، مئی میں 9، جون میں 22، جولائی میں 15، اگست میں 14، ستمبر میں 9، اکتوبر میں 6، نومبر میں ٹریفک پولیس کے اہلکار سمیت 6 افسران و اہلکاروں نے جام شہادت نوش کیا۔

دہشت گردوں نے حالیہ دنوں میں پولیس پر دستی بم اور فاسفورس سمیت مختلف کیمیکلز کا بھی استعمال شروع کردیا ہے، ماہ نومبر میں دو واقعات میں پولیس موبائلوں پر دستی بم اور فاسفورس پھینکا گیا جس کے نتیجے میں 2 اہلکار جاں بحق ہوگئے، موٹر سائیکل سوار ملزمان نے ڈیوٹی پر تعینات افسران و اہلکاروں کے علاوہ فرائض کی ادائیگی کے بعد گھر جانے والے اہلکاروں کو بھی کئی مرتبہ نشانہ بنایا۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment