پیر, 17 جون 2024

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد) وزیر مملکت برائے پانی و بجلی عابد شیر علی کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کا جھوٹ پوری قوم نے دیکھا جب کہ پی ٹی آئی اورشیخ رشید کی جھوٹی سیاست کا جنازہ سپریم کورٹ سے نکلے گا۔
سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے پانی و بجلی عابد شیر علی کا کہنا تھا کہ پاناما کیس کی روزانہ کی بنیاد پرسماعت کرنے کی درخواست کردی ہے جب کہ عدالت میں ہم نے واضح کیا کہ مریم نواز کا کسی چیز سے تعلق نہیں۔

عابد شیر علی کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ اخباری تراشوں پر کوئی فیصلہ نہیں کرے گی، پی ٹی آئی کا جھوٹ پوری قوم نے دیکھا کیونکہ انہوں نے کہا تھا ہمارے پاس ثبوت ہیں تو وہ ثبوت کہاں ہیں تاہم پی ٹی آئی اورشیخ رشید کی جھوٹی سیاست کا سپریم کورٹ میں جنازہ نکلے گا۔

 

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد)اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صاد ق نے کہا ہے کہ شیخ رشید چیمبر میں مجھے گلے لگا کر ملتے ہیں تاہم جب چینلزپرہوتے ہیں تواپوزیشن کی ذمہ داری ادا کرتے ہیں۔”اگر کوئی مجھے اسپیکر نہیں مانتا تو مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا“۔

پارلیمنٹ ہاﺅس میں صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے انکا کہنا تھا کہ ماضی میں گالیاں کھا کر تحمل کامظاہرہ کیا اب بھی کرونگا ۔ پی ٹی ائی ارکان کی40دن ایوان سے غیر خاضری پرقواعد کے مطابق ہرایوان کو آگاہ کرونگا
۔
انہوں نے کہا کہ خورشیدشاہ کے کہنے پرپیپلزپارٹی کے ارکان اجلاس میں پہنچ جاتے ہیں پاکستان میں جمہوریت ابھی اس سطح پرنہیں پہنچی کہ کورم کی شرط ختم کردیں.کورم کی شرط ختم کرنے حق میں نہیں۔”قومی اسمبلی میں کورم پوراکرناحکومت وسیاسی جماعتوں کی ذمہ داری ہے “۔پارلیمانی رپورٹرزپارلیمنٹ،صوبائی اسمبلیوں کی کارکردگی بہتربنانے کیلئے رہنمائی کریں۔قومی وصوبائی اسمبلیاں کی کوریج پرمامورصحافیوں کے وفودکاتبادلہ کیاجائے گا۔

ایاز صاد ق کا مزید کہنا تھا کہ یورپی یونین کے پروجیکٹ آئی پی4میں میڈیاتربیت،باہمی روابط پرتوجہ دی گئی۔

 

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد) چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے شریف خاندان کے لندن فلیٹس کی دستاویزات سپریم کورٹ میں جمع کرادیں ۔

تفصیلات کے مطابق عمران خان نے سپریم کورٹ میں زیر سماعت ملکی تاریخ کے اہم ترین پاناما کیس میں شواہد کے طور پر شریف خاندان کے لندن فلیٹس کی دستاویز ات جمع کرادی ہیں ۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ دستاویز متفرق درخواست کے ذریعے سپریم کورٹ میں جمع کرائی گئی ہیں جو التوفیق کیس کو شریف خانداد سے منسلک کرنے کے متعلق ہیں۔
یاد رہے شریف خاندان کا نام پاناما لیکس میں آنے کے بعد وزیر اعظم نواز شریف اور انکے خاندان کے خلاف پی ٹی آئی ، عوامی مسلم لیگ ،جماعت اسلامی ا وردیگر افراد نے سپریم کورٹ سے رجوع کر رکھا ہے جہاں پاناما لیکس کیس زیر سماعت ہے اور اس سلسلے میں عمران خان نے اب لندن میں شریف خاندان کے فلیٹس کا ریکارڈ بھی سپریم کورٹ میں جمع کرادیا ہے ۔

سپریم کورٹ اب تک اس کیس کی چھ سماعتیں کر چکا ہے تاہم اگلی سماعت 30نومبر ہو ہونے جا رہی ہے جس کیلئے تحریک انصاف نے حامد خان کی جگہ نعیم بخاری کو دلائل دینے کیلئے وکیل مقرر کیا ہے ۔

تحریک انصاف کا موقف ہے کہ پاناما لیکس میں آنے والی وزیر اعظم کے بچوں کی آف شور کمپنیوں او ر دیگر جائیدادوں کیلئے پیسے پاکستان سے بھیجے گئے جس کیلئے منی لانڈرنگ اور دیگر خفیہ ذرائع استعمال کیے گئے تاہم وزیر اعظم نے ان اثاثوں کا زکر نہ ہی اپنے گوشواروں میں کیا اور قومی اسمبلی میں اپنے خطاب کے دوران بھی اس حوالے سے متضاد بیانات دیے جس پر انہیں نااہل قرار دیا جائے ۔

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید اپنی درخواست کی پیروی خود کر رہے ہیں جبکہ جماعت اسلامی نے بھی وزیر اعظم نواز شریف اور انکے بچوں کے خلاف درخواست دائر کر رکھی ہے تاہم عدالت نے ان تمام درخواستوں کو یکجا کر کے سماعت کا آغاز کر رکھاہے جس کے لئے چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بینچ تشکیل دیا گیا ہے ۔

یاد رہے عمران خان گزشتہ دنوں لندن میں اپنے دوست کی ہمشیرہ کی شادی میں شرکت کیلئے گئے تھے جہاں انہوں نے شریف خاندان کے فلیٹس کے ثبوت اور شواہد اکٹھے کیے جنہیں آج سپریم کورٹ کے حوالے کر دیا گیا ہے ۔ عمران خان کے ہمراہ عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد بھی بیرون ملک پہنچے تھے ۔

 

 

ایمزٹی وی(اسلام آباد)پریس انفارمیشن ڈپارٹمنٹ میں نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے خواجہ سعد رفیق کا کہنا تھا کہ ترک صدر کی آمد کے موقع پر ایک سیاسی جماعت نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کے بائیکاٹ کا فیصلہ کیا ہے جو کہ انتہائی افسوسناک بات ہے۔سی پیک میں تاخیر کے حوالے سے تمام تر ذمہ داری عمران خان کی بچگانہ، ضدی اور انا پرستانہ سیاست پر عائد ہوتی ہے۔

وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ ترک صدر کی آمد کے موقع پر پی ٹی آئی کی جانب سے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کا بائیکاٹ افسوسناک ہے۔ عمران خان کو سیاست اور قومی مفاد میں فرق نہیں پتا تو بہتر ہے کہ وہ لوکاٹ بیچ لیں۔ اعتزاز احسن اور شیخ رشید کی جلن کیلئے ہمارے پاس کوئی برنول نہیں ہے۔

سی پیک کو متنازعہ بنانے کیلئے عمران خان نے ایڑی چوٹی کا زور لگادیا ہے۔کشمیریوں نے اپنے خون سے تحریک آزادی کو نیا لب و لہجہ بخشا اور جب ہم نے اس معاملے پر سٹینڈ لیا اور قوم کو اکٹھا کرنے کی کوشش کی تو بھی انہوں نے جوائنٹ سیشن کا بائیکاٹ کردیا جس پر انڈین میڈیا نے پاکستان کا خوب مذاق اڑایا اور کہا گیا کہ پاکستانی قوم کشمیر کاز پر متفق نہیں ہے۔ عمران خان نے تحریک آزادی کشمیر کو نہ صرف نقصان پہنچایا بلکہ اس پر معافی بھی نہیں مانگی۔

 

 

ایمزٹی وی(اسلام آباد) پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے اجلاس سے قبل پارلیمنٹ ہاؤس کی راہداری میں قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف خورشید شاہ اورعوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کے درمیان دلچسپ مکالمہ ہوا، شیخ رشید نے ہاتھ جوڑ کر خورشید شاہ سے سوال کیا کہ شاہ جی آپ عمران خان کی مخالفت کیوں نہیں چھوڑتے ہیں، جس پرخورشید شاہ نے کہا کہ میں سیاست دان ہوں بے غیرت نہیں، اس کے جواب میں شیخ رشید نے کہا کہ بے غیرت تو عمران خان بھی نہیں۔

خورشید شاہ نے مزاحیہ اندازمیں شیخ رشید کو کہا کہ یہاں ن لیگ والے کھڑے ہیں اس لیے ہم علیحدگی میں بات کریں گے، میں آپ کے ذریعے عمران خان کو اہم پیغام بھجواؤں گا۔

 

 


ایمزٹی وی(راولپنڈی )عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے راولپنڈی میں لگنے والے راحیل شریف کو ریٹائرمنٹ کے بعد الیکشن لڑنے کی اپیل پر مبنی پوسٹرز کو بکواس قراردیدیا اور کہاکہ راحیل شریف کل ریٹائر ہوگئے تو کسی نے میسج بھی نہیں کرنااور نہ ہی راحیل شریف کو مسلم لیگ ن میں شامل ہوتادیکھ رہاہوں ، یہ مرجائے گا لیکن چوروں کیساتھ شامل نہیں ہوگا۔

میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے شیخ رشید احمد کاکہناتھاکہ پوسٹرز کی کوئی حیثیت نہیں ، وردی اترنے کے بعد کوئی ووٹ نہیں دیتا، مشرف سے پوچھے ، وہ ذاتی طورپر راحیل شریف کو نومبر کے وسط میں ریٹائر ہوتادیکھ رہے ہیں ، توسیع نہیں لے رہے ۔ ریٹائرمنٹ کے بعد مسلم لیگ ن میں شمولیت سے متعلق سوال کے جواب میں شیخ رشید کاکہناتھاکہ یہ شہیدوں کا خاندان ہے ، چوروں کیساتھ شامل نہیں ہوگا، مرجائے گا لیکن ن لیگ میں نہیں جائے گا۔

 

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد) تحریک انصاف و عوامی مسلم لیگ کے کارکنوں اور پولیس کے درمیان تصادم کے باعث کمیٹی چوک میدان جنگ بن گیا جب کہ پولیس نے مشتعل کارکنان پر لاٹھی چارج کرتے ہوئے متعدد کو گرفتار کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق شیخ رشید احمد کی جانب سے نماز جمعہ کے بعد کمیٹی چوک پر حکومت کے خلاف جلسے کا اعلان کیا گیا تھا، وقت مقررہ پر جب کارکنوں نے کمیٹی چوک کا رخ کیا تو پولیس نے انہیں روکنے کی کوشش کی ،پولیس کی جانب سے روکے جانے پر مشتعل افراد نے پتھراؤ شروع کردیا جس کے بعد کمیٹی چوک اور مری روڈ میدان جنگ بن گئے۔

کارکنوں کے پتھراؤ پر پولیس نے لاٹھی چارج کے ساتھ ساتھ آنسو گیس اور ربڑ کی گولیاں برسانا شروع کی، اس دوران کئی افراد کو حراست میں بھی لیا گیا۔ اس تمام عمل کے دوران شیخ رشید سر پر ٹوپی اور چہرے پر کپڑا لگائے موٹر سائیکل میں پولیس اہلکاروں کے سامنے سے کئی مرتبہ نکلے لیکن پولیس اہلکار انہیں پہچان نہ سکے۔

اس دوران شیخ رشید احمد موٹر سائیکل پر سوار ہوکر ڈرامائی انداز میں آئے اور ایک میڈیا ہاؤس کی ڈی ایس این جی وین میں چڑھ کر میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ آج پنڈی میں پانی اور بجلی نہیں، حکومت نے پورا شہر بند کروادیا، لال حویلی کے سارے راستے بند ہیں، راولپنڈی کے عوام نے ثابت کردیا ہے کہ وہ حکومت کو نہیں مانتے، اگر کسی میں ہمت ہے تو وہ انہیں گرفتار کرکے دکھائے۔ بعد ازاں شیخ رشید کمیٹی چوک سے موٹر سائیکل پر دوبارہ نامعلوم مقام کی طرف روانہ ہوگئے۔

شیخ رشید کے روانہ ہونے کے بعد ایک بار پھر پولیس اور کارکنان میں جھڑپیں شروع ہوگئیں، مشتعل کارکنان نے پولیس پر چاروں طرف سے پتھراؤ کردیا جس کےبعد پولیس نے کارکنان پر شدید لاٹھی چارج کیا اور شیلنگ شروع کردی اور متعدد کارکنان کو گرفتار کرلیا جب کہ اس دوران مشتعل افراد نے کمیٹی چوک پر کھڑے کنٹینر کو بھی آگ لگادی۔

 

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ شیخ رشید کے جلسے میں شرکت سے روکنے کیلئے ہمیں تقریباً نظر بند کر دیا گیا اور باہر نکلنے کی اجازت نہیں دی جا رہی۔

میں عدلیہ سے سوال پوچھتا ہوں کہ کیا سارے قوانین ہم پر ہی لاگو ہوتے ہیں؟ ہمیں جلسے میں شرکت کرنے کی اجازت کیوں نہیں دی گئی؟ میں نے قانون کی کون سی خلاف ورزی کی ہے؟ حکومت بتائے یہ بادشاہت ہے یا جمہوریت؟ ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف کو جمہوریت کی کوئی سمجھ نہیں ہے۔

انھیں جمہوریت تب یاد آتی ہے جب ان کے احتساب کی بات ہوتی ہے۔ نواز شریف کے احتساب تک میں ان کا پیچھا نہیں چھوڑوں گا۔ انہوں نے اعلان کیا کہ 2 نومبر کو ہم اسلام آباد میں آ کر بتائیں گے کہ عوام کی طاقت کیا ہوتی ہے۔ حکومت عوام کے سمندر کو نہیں روک سکتی۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ ماڈل ٹاؤن میں جن پولیس والوں نے گولیاں چلائیں وہ قاتل ہیں۔ شہداء پر گولیاں چلانے والوں کو اور دونوں بھائیوں کو جیلوں میں ڈالیں گے۔

 

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد)تمام تر رکاوٹوں کے باوجود عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے موٹرسائیکل پر سوار ہو کر کمیٹی چوک انٹری دیدی اور ہاتھ میں سگار لیے نجی ٹی وی چینل کی ڈی ایس این جی پر براجمان ہوکر کارکنان سے خطاب شروع کردیا۔
کمیٹی چوک میں کارکنوں سے اپنے خطاب میں شیخ رشید احمد نے کہاکہ میں نے وعدہ کیا تھا، وعدے کے مطابق آگیا ہوں ، اسپیشل برانچ کے لوگ فوٹو لے رہے ہیں ، ان کو نواز شریف کے ساتھ ہی جیل میں پھینکیں گے۔میرےبہنوں اوربھائیوں کےگھرمیں چھاپےمارےجارہےہیں.
انہوں نے کہا کہ میں نے نواز شریف کو چیلنج کیا تھا کہ میں آرہا ہوں تو میں آگیا ہوں۔”آﺅ ہمت ہے تو گرفتار کرو میں آگیا ہوں “۔دونومبر کو بھی ہم یہاں رہیں گے ۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ میں نے کارکنوں سے بھی وعدہ کیا تھا کہ میں جلسہ گاہ پہنچوں گا تو میں پہنچ گیا ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا قصور کیا ہے ہم جمہوریت چاہتے ہیں ۔ دو نومبر کو عوام کا سمند ر ہو گا اور کوئی روک نہیں سکے گا ۔ ”میں ڈرنے والے دن پیدا ہی نہیں ہوا ۔ ہم جمہوریت پسند ہیں ۔ تم نے کہا تھا کہ میں چھپ گیا ہوں میں یہاں ہوں “۔

شیخ رشید نے کہا کہ عوامی تحریک اور دیگر جماعتیں بھی ہمارے ساتھ ہیں ۔ اسپیشل برانچ اور سفید کپڑوں والوں سے قانون کے مطابق حساب لیں گے ۔ اب تک ہمارے ساڑھے چار سو کارکنوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے ۔ حکومت نے راولپنڈی بند کر کے بچوں سے پانی بھی چھین لیا ۔
’’سفید پوش کپڑوں میں ملبوس لوگوں کو نواز شریف کے ساتھ جیلوں میں ڈالیں گے‘‘ ۔ سفید کپڑوں والے پکڑیں تو انہیں نیچے گرا لو ۔ کارکن ان کی تصویریں بنا لیں ۔شیخ رشید موٹر سائیکل پر آئے اور موٹر سائیکل پر ہی روپوش ہو گئے ، اپنے خطاب کے دوران وہ کارکنوں کی گرفتاری کی نشاندہی بھی کرتے رہے ۔ویڈیو دیکھیں۔

 


ایمزٹی وی(اسلام آباد) 2 نومبر کے دھرنے سے پہلے عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کی جانب سے راولپنڈی میں جلسے کا اعلان کیا گیا تھا ۔ جلسے کو روکنے کے لیے کھلاڑیوں سے پہلے حکومت نے لاک ڈاؤن کرتے ہوئے اسلام آباد میں بنی گالہ اور راولپنڈی میں لال حویلی کا محاصرہ کر لیا ۔
حکومت کی طرف سے شیخ رشید کو گرفتار یا نظر بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق پولیس نے شیخ رشید کی گاڑی پکڑ لی جبکہ ڈرائیور اور گن مین کو حراست میں لے لیا گیا۔
دوسری جانب شیخ رشید کی طرف سے دو بجے لال حویلی پہنچنے کا اعلان کیا گیا ہے ۔ راولپنڈی پولیس نے کریک ڈاؤن کرتے ہوئے لال حویلی جانے والے تمام راستے بند کر دیئے ۔ لال حویلی روڈ پر سو سے زائد کنٹینرز لگا دیئے گئے۔
جبکہ جلسہ گاہ کو بھی سیل کر دیا گیا ، ساؤنڈ سسٹم اٹھا لیا گیا اور میٹرو سروس کو بھی بند کرنے کا اعلان کیا گیا ۔ شیخ رشید نے ٹویٹ میں لال حویلی کے راستے سیل کرنے پر حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ۔ ان کا کہنا تھا کہ بڑا شیر بنا پھرتا ہے جو ایک حویلی سے ڈرتا ہے

 

Page 4 of 5