ھفتہ, 25 ستمبر 2021


لندن میں دوروزہ"عالمی ایجوکیشن سمٹ"کاانعقاد

لندن: برطانیہ اور کینیاکے مشترکہ تعاون سے لندن میں دو روزہ ـ"عالمی ایجوکیشن سمٹ" کاانعقادکیاگیا۔

جس میں پاکستان سمیت مختلف ممالک کے وزرائے تعلیم نے شرکت کی۔

اس سربراہی اجلاس کا مقصدعالمی شراکت برائے تعلیم (جی پی ای) کے لئے 5 بلین امریکی ڈالر اکٹھا کرنا ہے جس میں 90 ترقی پذیر ممالک اور خطوں میں لڑکوں اور لڑکیوں کی معیاری تعلیم کو یقینی بنانے میں مدد مل سکتی ہے

2020 میں جب بیشتر اسکول بند ہونے کی وجہ سےدنیا بھر میں زیادہ سے زیادہ بچوں کی تعلیم میں دہائیاں آہستہ لیکن مستحکم پیشرفت اچانک اچانک 2020 میں ختم ہوگئی،عوامی تعلیم میں مستقل کم سرمایہ کاری کے تناظر میںبہت سے منصوبے مناسب پلاننگ نہ ہونے کی وجہ سے بند ہوگئے۔

اس کی وجہ سے وبائی امراض کے دوران حکومتوں کی دور دراز تعلیم کی فراہمی میں سنگین خلفشار پیدا ہوئے۔

بچوں کی تعلیم میں جاری رکاوٹ نے اس امر کو اجاگر کیا ہے کہ نظام تعلیم میں دیرینہ عدم مساوات کو دور کرنے کے لئے حکومتوں کو زیادہ سے زیادہ توجہ اور وسائل دینے کے لئے وبائی امراض کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

ان چیلنجوں سے نمٹنے کے لئے ، تعلیم کی وزارتوں کو بین الاقوامی اہداف کو پورا کرنے اور تعلیمی بجٹ کو ممکنہ سادگی میں کٹوتیوں سے بچانے کے لئے قومی سطح پر مالی اعانت کے وعدے کرنے چاہیں۔ ایسا نہ کرنے سے لاکھوں لاکھوں بچے کم ہو جائیں گے جن کی تعلیم وبائی امراض کے دوران قربان کردی گئی تھی ، جن میں سے بہت سے ابھی اسکول واپس نہیں آئے تھے۔

یاد رہےیہ سربراہی اجلاس عین اس وقت ہورہا ہے جب کوویڈ 19 وبائی امراض سے متعلقہ رکاوٹوں کی وجہ سے حکومتوں کو بڑے چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑرہاہے۔ زیادہ تر ممالک میں اسکول بند ہونے پر پوری دنیا میں زیادہ سے زیادہ بچوں کی تعلیم میں دہائیوں کی آہستہ لیکن مستحکم پیشرفت اچانک ختم ہوگئی۔

بہت ساری بندشیں اچھے ردعمل کے منصوبے کے بغیر ہوئی ، اور عوامی تعلیم میں مسلسل کم سرمایہ کاری کے تناظر میں۔ اس کی وجہ سے وبائی امراض کے دوران حکومتوں کی دور دراز تعلیم کی فراہمی میں سنگین خلفشار پیدا ہوئے۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment