اتوار, 14 جولائی 2024


لوگوں کوپاک بھارت تعلقات کےلئےلازمی پالیسی کی ضرورت ہے

سابق سفیر اور چانسلر سینٹرل یونیورسٹی آف جموں (CUJ) گوپالاسامی پارھراٹھاتھی نے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان نے ثقافتی تاریخ کا اشتراک کیا ہے کہ دونوں ملک اچھے تعلقات کے لئے لوگوں پر مبنی پالیسی کی ضرورت ہے.مجھے درد محسوس ہوتا ہے جب پاکستان میں پاکستانی بچوں کو طبی علاج کی ضرورت ہے تو ویزا کے لئے چھ ہفتوں تک انتظار کرنا ہوگا. یہ وہی معاملات ہیں جن پر ہمیں ایک موقف لینے کی ضرورت ہے. اگر کچھ پاکستانی فنکاروں کو انجام دینے کے لئے آئے تو ہمیں کوئی مسئلہ نہیں ہونا چاہئے. جمہوریہ یونیورسٹی میں جنوبی ایشیا - انڈونیشیا کے پانی کے معاہدے اور بھارت-پاک تعلقات میں "ٹرانسمیشن مسائل" پر مرکزی خیال، موضوع پر ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے، "ایک ملک کی طرف اس نازک نقطہ نظر کو آپ کے اندرونی نقصان پہنچایا جائے گا."سرینگر کی بنیاد پر چنین کارپوریشن کے سابق جی سی سی لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) سید عطائ حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان بھارت کے ساتھ روایتی جنگ سے لڑ نہیں سکتا اور اسی وجہ سے صرف "پراکسی جنگ جس کا ملک کشمیر میں لڑ رہا ہے ان کے حق میں ہے" .انہوں نے کہا کہ "ہمارے پڑوسیوں نے داخلی سیکورٹی اور غیر ملکی پالیسی کو مسترد کرنے کے لئے مختلف مراحل پر مشغول رکھی ہے."سفیر ٹی سی اے راغان، بھارتی سیکرٹری آف کونسل آف ورلڈ آفیسر (آئی سی ڈبلیو اے) کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) نے کہا کہ طویل عرصے تک "بھارت اور پاکستان کے درمیان دو طرفہ تعلقات میں بند نہیں" تھا. "کارتر پور صحابہ ایک اہم سفارتی پیش رفت ہے اور ثابت ہوا کہ دو طرفہ تعلقات میں اختلافات باقی رہے گی. انہوں نے زور دیا کہ مجموعی پالیسی دونوں ملکوں کو خوشحالی میں مدد ملے گی. بھارت کے ثقافتی تناظر پاکستان میں بھارت کا فائدہ اٹھانے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے. بھارت میں سپریم کورٹ اور الیکشن کمیشن کی ترقی نے پورے جنوبی ایشیا کو پاکستان سمیت متاثر کیا ہے.

 

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment